John Elia Poetry – 64 Ever Green Jaun Elia Shayari in Urdu Images

Here we are sharing John Elia Poetry / Shayari in Urdu. John Elia (1931-2002) was a prominent Pakistani Urdu-language poet, scholar, philosopher, and biographer. He is widely regarded as one of the most influential and enigmatic poets of the 20th century in the Urdu literary world. Elia’s poetry was known for its deep introspection, melancholy themes, and a profound sense of existentialism.

His poetry often delved into the complexities of human emotions, existential crises, and the fragility of life. Jaun Elia’s verses were marked by a unique blend of classical and modern styles, making his work accessible and thought-provoking for a wide audience.

john elia poetry

تُند لمحوں سے ٹوٹ پھوٹ کے میں

تیری بانہوں میں آن پڑتا ہوں   

Tund lamhoon se toot phoot ke mein

Teri banho mein aan parta hon

Click to Share 

John Elia Poetry in Urdu Language

Apart from his poetry, John Elia was a distinguished scholar of languages and literature, with expertise in multiple languages including Urdu, Persian, Arabic, and English. He also authored biographies and critical essays, contributing significantly to Urdu literature.

John Elia’s poetry was marked by personal struggles and hardships, which were often reflected in his poetry. Despite facing adversity, his work continues to resonate with readers, and his legacy remains an integral part of Urdu literature. He is celebrated for his ability to capture the complexities of the human condition with profound depth and emotional resonance.

john elia poetry

 

کمسنی میں بہت شریر تھی وہ

اب تو شیطان ہو گئی ہو گی

Kumsinee mein bohat shareer thi woh

Ab to shetan ho gayi ho gi

Click to Share 

 

john elia poetry

وہ جو رہتی تھی دل محلے میں

پھر وہ لڑکی مجھے ملی ہی نہیں

Woh jo rehti thi dil muhallay mein

Phir woh larki mujhe mili hi nahi

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم سُنے اور سُنائےجاتے تھے

رات بھر کی کہانیاں تھے ہم

Hum sunay aur sunaye jatay thay

Raat bhar ki kahaniyan thay hum

Click to Share 

john elia poetry

 

کون اس گھر کی دیکھ بھال کرے

روز اک چیز ٹوٹ جاتی ہے

Kon is ghar ki dekh bhaal kere

Roz ik cheez toot jati hai

Click to Share 

john elia poetry

 

اک دل ہے جو ہر لمحہ جلانے کے لئے ہے

جو کچھ ہے یہاں آگ لگانے کے لئے ہے

Ik dil hai jo har lamha jalanay ke liye hai

Jo kuch hai yahan aag laganay ke liye hai

Click to Share 

john elia poetry

 

 مرچکا ہے دل مگر زندہ ہوں میں
 

زہر جیسی کچھ دوائیں چاہییں 
 

پوچھتی ہیں آپ، آپ اچھے تو ہیں 
 

جی میں اچھا ہوں ، دعائیں چاہییں 

Mar chuka hai dil magar zindah hon mein 

Zeher jaisi kuch duwaein chahiye 

Poochti hain aap, aap achay to hain 

Jee mein acha hon, duayen chahiye

Click to Share 

john elia poetry

 

اب تو ہر بات یاد رہتی ہے

غالباً میں کسی کو بھول گیا

Ab to har baat yaad rehti hai

Ghaliban mein kisi ko bhool gaya

Click to Share 

john elia poetry

 

اس گلی نے یہ سن کے صبر کیا

جانے والے یہاں کے تھے ہی نہیں

Is gali ne yeh sun ke sabr kya

Jane walay yahan ke thay hi nahi

Click to Share 

john elia poetry

 

مستقل بولتا ہی رہتا ہوں

کتنا خاموش ہوں میں اندر سے

Mustaqil boltaa hi rehta hon

Kitna khamosh hon mein andar se

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم کو یاروں نے یاد بھی نہ رکھا

جون یاروں کے یار تھے ہم تو

Hum ko yaaron ne yaad bhi nah rakha

Jaon yaaron ke yaar thay hum to

Click to Share 

john elia poetry

 

تیغ بازی کا شوق اپنی جگہ

آپ تو قتل عام کرتے ہیں

Tegh baazi ka shoq apni jagah

Aap to qatal aam karte hain

Click to Share 

john elia poetry

 

تمام نقش تمنا فریب تھے سو تھے

میں سارے نقش تمنا بگاڑ ڈالوں گا

Tamam naqsh tamanna fraib thay so thay

Mein saaray naqsh tamanna bigaar daloon ga

Click to Share 

john elia poetry

 

جب ڈوبتا چلامیں تاریکیوں کی تہ میں

تہ میں تھا اک دریچہ اور اُس میں آسماں تھا

Jab dobta chala main tarikeon ki teh mein

Teh mein tha ik darecha aur uss mein aasmaa tha

Click to Share 

john elia poetry

 

زندگی ایک فن ہے لمحوں کو

اپنے انداز سے گنوانے کا

Zindagi aik fun hai lamhoon ko

Apne andaaz se gunwanay ka

Click to Share 

john elia poetry

 

اتنی محنت سے بگاڑا ہے خود کو

جائیے آپ کسی اور کو سیدھا کیجیے

Itni mehnat se bigaara hai khud ko

Jaiye aap kisi aur ko seedha kiijiye

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم غریبوں کی آن بان ہے کیا

اپنی محرومیاں چھپاتے ہیں

Hum ghareebon ki aan baan hai kya

Apni mehromiyaan chupatay hain

Click to Share 

john elia poetry

 

خواب با خواب جس کو چاہا تھا

رنگ بار رنگ اُسی کو بھول گیا

Khawab ba khawab jis ko chaha tha

Rang baar rang usi ko bhool gaya

Click to Share 

john elia poetry

 

کام کی بات میں نے کی ہی نہیں

یہ میر اطورِ زندگی ہی نہیں

Kaam ki baat mein ne ki hi nahi

Yeh Meer tour e zindagi hi nahi

Click to Share 

john elia poetry

 

میں تمہارے ہی دم سے زندہ ہوں

مر ہی جاؤں جو تم سے فرصت ہو

Mein tumahray hi dam se zindah hon

Mar hi jaoon jo tum se fursat ho

Click to Share 

john elia poetry

 

پل قیامت کے سود خوار ہیں جون

یہ ابد کی کمائی کرتے ہیں

Pal qayamat ke sood khawar hain Jaon

Yeh abadd ki kamaai karte hain

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم نہ جیتے ہیں اور نہ مرتے ہیں

درد بھیجو نہ تم دوا بھیجو

Hum nah jeetay hain aur nah martay hain

Dard bhaijho nah tum dawa bhaijho

Click to Share 

john elia poetry

 

خوب ہے شوق کا یہ پہلو بھی

میں بھی برباد ہو گیا تو بھی

Khoob hai shoq ka yeh pehlu bhi

Mein bhi barbaad ho gaya to bhi

Click to Share 

john elia poetry

 

بات تو دل شکن ہے پر یارو

عقل سچّی تھی عشق جھوٹا تھا

Baat to dil shikan hai par yaaro

Aqal sachhi thi ishhq jhoota tha

Click to Share 

john elia poetry

 

کبھی چاند اس نے کہا مجھے

کبھی آسماں سے گرا دیا

Kabhi chaand is ne kaha mujhe

Kabhi aasmaa se gira diya

Click to Share 

john elia poetry

 

جی ہی لینا چاہیے تھا

مرتے مرتے خیال آیا مجھے

Jee hi lena chahiye tha

Martay martay khayaal aaya mujhe

Click to Share 

john elia poetry

 

اک تیری برابری کے لیے

خود کو کتنا گرا چکا ہوں میں

Ik teri barabari ke liye

Khud ko kitna gira chuka hon mein

Click to Share 

john elia poetry

 

اک شخص کر رہا ہے ابھی تک وفاکا ذکر

کاش اس زباں دراز کا منہ نوچ لے کوئی

Ik shakhs kar raha hai abhi tak wafa ka zikar

Kash is zuba daraaz ka mun noch le koi

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم نے جانا تو ہم نے یہ جانا

جو نہیں ہے وہ خوبصورت ہے

Hum ne jana to hum ne yeh jana

Jo nahi hai woh khobsorat hai

Click to Share 

john elia poetry

 

اب فقط یادرہ گئی ہے تیری

اب فقط تیری یاد بھی کب تک

Ab faqat yad reh gayi hai teri

Ab faqat teri yaad bhi kab tak

Click to Share 

john elia poetry

 

سو گئے پیڑ جاگ اٹھی خوشبو

زندگی خواب کیوں دکھاتی ہے

So gaye pairr jaag uthi khushbu

Zindagi khawab kyun dukhati hai

Click to Share 

John Elia Poetry And Urdu Intro

جون ایلیا (1931-2002) پاکستانی اردو زبان کے ممتاز شاعر، عالم، فلسفی، اور سوانح نگار تھے۔ ان کا شمار اردو ادبی دنیا میں 20ویں صدی کے سب سے زیادہ بااثر اور پراسرار شاعروں میں ہوتا ہے۔ ایلیا کی شاعری اپنے گہرے خود شناسی، اداس موضوعات اور وجودیت کے گہرے احساس کے لیے مشہور تھی۔

ان کی شاعری میں اکثر انسانی جذبات کی پیچیدگیوں، وجودی بحرانوں اور زندگی کی نزاکتوں کا ذکر ہوتا ہے۔ جون ایلیا کی شاعری کلاسیکی اور جدید طرزوں کے انوکھے امتزاج سے نشان زد تھیں، جس سے ان کے کام کو وسیع سامعین کے لیے قابل رسائی اور فکر انگیز بنایا گیا۔

اپنی شاعری کے علاوہ، جون ایلیا زبانوں اور ادب کے ایک ممتاز عالم تھے، اردو، فارسی، عربی اور انگریزی سمیت متعدد زبانوں میں مہارت رکھتے تھے۔ انہوں نے سوانح حیات اور تنقیدی مضامین بھی تصنیف کیے، اردو ادب میں نمایاں حصہ ڈالا۔

جون ایلیا کی زندگی ذاتی جدوجہد اور مشکلات سے عبارت تھی، جو اکثر ان کی شاعری میں جھلکتی تھی۔ مشکلات کا سامنا کرنے کے باوجود، ان کا کام قارئین کے ساتھ گونجتا رہتا ہے، اور ان کی میراث اردو ادب کا ایک لازمی حصہ ہے۔ وہ انسانی حالت کی پیچیدگیوں کو گہری گہرائی اور جذباتی گونج کے ساتھ گرفت میں لینے کی صلاحیت کے لیے مانےجاتے ہیں۔

john elia poetry

 

تجھ کو یقین آئے نہ آئے ، یہ اور بات

میں تجھ سے دور رہ کے بھی تیرے ہی پاس ہوں

Tujh ko yaqeen aaye nah aaye, yeh aur baat

Mein tujh se daur reh ke bhi tairay hi paas hon

Click to Share 

john elia poetry

 

کتنارویا تھا میں تیری خاطر

اب جو سوچوں تو ہنسی آتی ہے

Kitna roya tha mein teri khatir

Ab jo sochon to hansi aati hai

Click to Share 

john elia poetry

 

یوں جو تکتا ہے آسمان کو تو

کوئی رہتا ہے آسمان میں کیا

یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا

ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا

Yun jo taktaa hai aasman ko to

Koi rehta hai aasman mein kya

Yeh mujhe chain kyun nahi parta

Aik hi shakhs tha Jahan mein kya

Click to Share 

john elia poetry

 

اے جان داستاں تجھے آیا کبھی خیال

وہ لوگ کیا ہوئے جو تیری داستاں کے تھے

Ae jaan dastan tujhe aaya kabhi khayaal

Woh log kya hue jo teri dastan ke thay

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم دونوں میں پیار بہت تھا

کہہ لینے سے کیا ہوتا ہے

Hum dono mein pyar bohat tha

Keh lainay se kya hota hai

Click to Share 

john elia poetry

 

اب میری کوئی زندگی ہی نہیں

اب بھی تم میری زندگی ہو گی

Ab meri koi zindagi hi nahi

Ab bhi tum meri zindagi ho gaya

Click to Share 

john elia poetry

 

جون ہم بھی عجیب آدمی نکلے

ایک ہی شخص کے ہو کے رہ گئے

Jaon hum bhi ajeeb aadmi niklay

Aik hi shakhs ke ho ke reh gaye

Click to Share 

john elia poetry

 

میرے غصے کا اثر کیا ہو گا

مجھے غصے میں ہنسی آتی ہے

Mere ghusse ka assar kya ho ga

Mujhe ghusse mein hansi aati hai

Click to Share 

john elia poetry

 

آخراب کس کی بات مانوں میں

جو ملا اس نے لاجواب کیا

Aakhir ab kis ki baat manoo mein

Jo mila is ne lajawab kya

Click to Share 

john elia poetry

 

صرف اپنا خیال رکھنا تھا

اور یہ بھی نہ ہو سکا ہم سے

Sirf apna khayaal rakhna tha

Aur yeh bhi nah ho saka hum se

Click to Share 

john elia poetry

 

حال یہ ہے کہ اپنی حالت پر

غور کرنے سے بچ رہا ہوں میں

Haal yeh hai ke apni haalat par

Ghhor karne se bach raha hon mein

Click to Share 

john elia poetry

 

یہاں کسی کو بھی کچھ حسب آرزو نہ ملا

کسی کو ہم نہ ملے اور ہم کو تو نہ ملا

Yahan kisi ko bhi kuch hasb e arzoo nah mila

Kisi ko hum nah miley aur hum ko to nah mila

Click to Share 

john elia poetry

 

مجھے محسوس ہوتا ہے کہ مجھ سے

یقیناًاک جسارت ہو گئی ہے

تمہیں کوئی شکایت تو نہ ہو گی

مجھے تم سے محبت ہو گئی ہے

Mujhe mehsoos hota hai ke mujh se

Yaqeenan ik jasaarat ho gayi hai

Tumhe koi shikayat to nah ho gi

Mujhe tum se mohabbat ho gayi hai

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم “حسین ترین ” امیر ترین ” ذہین ترین” اور زندگی میں ” ہر حوالے سے بہترین” ہو کر بھی

بالآخر مر ہی جائیں گے

Hum” Haseen tareen” Ameer tareen” zaheen tareen” aur zindagi mein” har hawalay se behtareen” ho kar bhi bil akhir mar hi jayen ge

 

Click to Share 

john elia poetry

 

عمر گزرے گی امتحان میں کیا

داغ ہی دیں گے مجھ کو دان میں کیا

Umar guzray gi imtehaan mein kya

Daagh hi den gay mujh ko daan mein kya

Click to Share 

john elia poetry

 

دشمنوں تم کو خوف کس کا ہے

مار ڈالو کہ میں اکیلا ہوں

Dushmanon tum ko khauf kis ka hai

Maar daalo ke mein akela hon

Click to Share 

john elia poetry

 

کیا کہا عشق جاودانی ہے

آخری بار مل رہی ہو کیا

Kya kaha ishhq javedani hai

Aakhri baar mil rahi ho kya

Click to Share 

john elia poetry

 

ہم تو وہ ہیں جو خدا کو بھول گئے

تو میری جان کس گمان میں ہے

Hum to woh hain jo kkhuda ko bhool gaye

Tu meri jaan kis gumaan mein hai

Click to Share 

john elia poetry

 

کتنی دلکش ہو تم ، کتنادل جو ہوں میں

کیا ستم ہے کہ ہم لوگ مر جائیں گے

Kitni dilkash ho tum, kitna dil jo hon mein

Kya sitam hai ke hum log mar jayen ge

Click to Share 

john elia poetry

 

مجھے اب تم سے ڈر لگنے لگا ہے

تمہیں مجھ سے محبت ہو گئی کیا

Mujhe ab tum se dar lagnay laga hai

Tumhe mujh se mohabbat ho gayi kya

Click to Share 

john elia poetry

 

تھوڑا بھی نہیں ، اچھا خاصا کر کے

کیا ملا تمہیں اتنا نتاشہ کر کے

Thora bhi nahi, acha khasa kar ke

Kya mila tumhe itna tamasha kar ke

Click to Share 

john elia poetry

 

خطائیں ہو ہی جاتی ہیں ازالے بھی تو ممکن ہیں

جسے ہم سے شکایت ہو اسے کہنا ملے ہم سے

Khataien ho hi jati hain azale bhi to mumkin hain

Jisay hum se shikayat ho usay kehna miley hum se

Click to Share 

john elia poetry

 

جب تجھے میری چاہ تھی جاناں

بس وہی وقت تھا کڑا مجھ پر

Jab tujhe meri chaah thi janan

Bas wohi waqt tha kara mujh par

Click to Share 

john elia poetry

 

سوچتا ہوں کبھی کبھی یونہی

آخرحرج کیا تھا اُسے منانے میں

Sochta hon kabhi kabhi yuhin

Akhir harj kya tha ussay mananay mein

Click to Share 

john elia poetry

 

میں تمہیں بھول بھی تو سکتا تھا

ہاں مگر یہ نہیں ہوا مجھ سے

Mai tumhain bhool bhi to sakta tha

Han magar ye nahi hua mujh se

Click to Share 

john elia poetry

 

اس شخص کو کسی چیز سے محروم کرو گے

حاصل کو بھی جس نے کبھی حاصل نہیں سمجھا

Is shakhs ko kisi cheez se mahroom karo ge

Haasil ko bhi jis ne kabhi haasil nahi samjha

Click to Share 

john elia poetry

 

کیسے کہیں کہ تجھ کو بھی ہم سے ہے واسطہ کوئی

تو نے تو ہم سے آج تک کوئی گلہ نہیں کیا

Kaisay kahin ke tujh ko bhi hum se hai vaastaa koi

To ne to hum se aaj tak koi gilah nahi kya

Click to Share 

john elia poetry

 

میں اب بھی خود سے ہوں جواب طلب

وہ مجھے بے سوال چھوڑ گیا

Mein ab bhi khud se hon jawab talabb

Woh mujhe be sawal chore gaya

Click to Share 

john elia poetry

 

اےشخص اب تو مجھے کو سبھی کچھ قبول ہے

یہ بھی قبول ہے کہ تجھے چھین لے کوئی

Ae shakhs ab to mujhe ko sabhi kuch qubool hai

Yeh bhi qubool hai ke tujhe chean le koi

Click to Share 

john elia poetry

 

جانے کہاں بسے گی تو

جانے کہاں رہوں گا میں

Jane kahan basey gi to

Jane kahan rahon ga mein

Click to Share 

john elia poetry

 

کیوں شکن ڈالتے ہو ماتھے پر

بھول کر آ گئے ہیں جاتے ہیں

Kyun shikan daaltay ho maathey par

Bhool kar aa gaye hain jatay hain

Click to Share 

john elia poetry

 

کر کےاک دوسرے سے عہدوفا

آؤ کچھ دیر جھوٹ بولیں ہم

Kar ke ik dosray se ahd e wafa

Aao kuch der jhoot bolein hum

Click to Share 

john elia poetry

 

اک عجیب سی جنگ ہے مجھ میں

کوئی مجھ سے ہی تنگ ہے مجھ میں

Ik ajeeb si jung hai mujh mein

Koi mujh se hi tang hai mujh mein

 

Click to Share 

 

Thanks to like John Elia Poetry, You can also read Best Urdu Quotes

اگر آپ کو ہماری پوسٹ پسند آئی ہے تو براہ کرم اسے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔ شکریہ

Spread the love

10 thoughts on “John Elia Poetry – 64 Ever Green Jaun Elia Shayari in Urdu Images”

  1. یوں جو تکتا ہے آسمان کو تو

    کوئی رہتا ہے آسمان میں کیا

    یہ مجھے چین کیوں نہیں پڑتا

    ایک ہی شخص تھا جہان میں کیا

    Yun jo taktaa hai aasman ko to

    Koi rehta hai aasman mein kya

    Yeh mujhe chain kyun nahi parta

    Aik hi shakhs tha Jahan mein kya
    Good effort

    Reply

Leave a Comment