Top 26 Noshi Gilani Poetry in Urdu – 2 Line Urdu Poetry Copy Paste

Noshi Gilani poetry in urdu often explores themes of love, longing, and the human condition. Her poetry replete with imagery and metaphors that evoke profound emotions. With a unique blend of simplicity and depth, her poetry appeals to a wide range of readers, from seasoned literary enthusiasts to those who are new to Urdu poetry.

Noshi Gilani poetry in urdu has received numerous awards and accolades for her contribution to Urdu literature. Her books, including “Ay Meer-e-Lab,” “Shahar Mein Utarta Hoon,” and “Mohabbat Aik Subh Barri Hogai,” have gained widespread acclaim and continue to be cherished by poetry lovers.

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

خواہش کے اظہار سے ڈرنا سیکھ لیا ہے

دل نے کیوں سمجھوتہ کرنا سیکھ لیا ہے

Khwahish ke izhaar se darna seekh liya hai

Dil ne kyun samjhota karna seekh liya hai

Click to Share 

 

Noshi Gilani : A Poetry Maestro in Urdu

Noshi Gilani, a renowned name in the world of Urdu poetry, has captivated the hearts of readers and enthusiasts with her enchanting verses. Her profound poetry resonates with the essence of life, love, and human emotions. In this article, we delve into the captivating world of Noshi Gilani poetry in Urdu and explore the reasons behind her enduring popularity. Noshi Gilani, whose real name is Khadijah Akhtar, was born in Bahawalpur, Pakistan. She ventured into the world of poetry at a young age, demonstrating an innate talent for crafting verses that could touch the deepest recesses of the human soul. Noshi Gilani poetry in urdu over the years, gained recognition as a contemporary Urdu poetry whose work has left an indelible mark on the literary landscape.

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

تجھ سے اب اور محبت نہیں کی جاسکتی

خود کو اتنی بھی اذیت نہیں دی جاسکتی

Tujh se ab aur mohabbat nahi ki ja sakti

Khud ko itni bhi aziat nahi di ja sakti

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

دل کی منزل اُس طرف ہے گھر کا رستہ اس طرف

ایک چہرہ اُس طرف ہے ایک چہرہ اس طرف

Dil ki manzil uss taraf hai ghar ka rasta is taraf

Aik chehra uss taraf hai aik chehra is taraf

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

اک مصیبت تو نہیں ٹوٹی سواب اس دل سے

جس قیامت نے گزرنا ہے گزر جایا کرے

Ik museebat to nahi tooti so ab is dil se

Jis qayamat ne guzarna hai guzar jaya kere

Click to Share 

 

Themes in Noshi Gilani Poetry in Urdu

Noshi Gilani poetry in urdu has a universal appeal that transcends cultural and linguistic boundaries. Her work has been translated into various languages, allowing a global audience to appreciate the beauty of her verses. In Indo Pak and among Urdu-speaking communities worldwide, she is celebrated as a poet who has added a modern twist to the classical tradition of Urdu poetry.

You can also visit Best Urdu Poetry & Quotes

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

حقیقتوں کا تصور محال لگتا ہے

کسی کی یاد میں رہنا کمال لگتا ہے

Haqeeqaton ka tasawwur mahaal lagta hai

Kisi ki yaad mein rehna kamaal lagta hai

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

میری کتاب محبت میں اس کا ذکر نہیں

وہ خوش خیال غلط فہمیوں میں رہتا ہے

Meri kitaab mohabbat mein is ka zikar nahi

Woh khush khayaal ghalat fehmiyon mein rehta hai

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

یہ آرزو تھی کہ ہم اس کے ساتھ ساتھ چلیں

مگر وہ شخص تو رستہ بدلتا جاتا ہے

Yeh arzoo thi ke hum is ke sath sath chalein

Magar woh shakhs to rasta badalta jata hai

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

مرے خیال کی خوشبو کو تازگی دینا

مرے خدا مرے لفظوں کو روشنی دینا

Marey khayaal ki khushbu ko taazgee dena

Marey kkhuda marey lafzon ko roshni dena

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

اسے لاکھ دل سے پکار لو اسے دیکھ لو

کوئی ایک حرف جواب میں نہیں آئے گا

Usay laakh dil se pukaar lo usay dekh lo

Koi aik harf jawab mein nahi aaye ga

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

اب کس سے کہیں اور کون سنے

جو حال تمہارے بعد ہوا

Ab kis se kahin aur kon sunay

Jo haal tumahray baad hua

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

تتلیاں جگنو سبھی ہوں گے مگر دیکھے گا کون

ہم سجا بھی لیں اگر دیوار و در دیکھے گا کون

Titliyan jugno sabhi hon ge magar dekhe ga kon

Hum saja bhi len agar deewar o dar dekhe ga kon

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

وہ حرف حرف میری روح میں اترتا گیا

جو بات کرتا گیا اور اُداس کرتا گیا

Woh harf harf meri rooh mein utartaa gaya

Jo baat karta gaya aur udas karta gaya

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

یہ میری عمر میرے ماہ وسال دے اس کو

میرے خدا مرے دُکھ سے نکال دے اس کو

Yeh meri Umar mere mah o saal day is ko

Mere kkhuda marey dukh se nikaal day is ko

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

کسی حرف میں کسی باب میں نہیں آئے گا

تیرازکر میری کتاب میں نہیں آئے گا

Kisi harf mein kisi baab mein nahi aaye ga

Tera zikr meri kitaab mein nahi aaye ga

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

یہ سردیوں کا اداس موسم کہ دھڑکنیں برف ہو گئی ہیں

جب ان کی یخ بستگی پر کھنا تمازتیں بھی شمار کرنا

Yeh sardiyoon ka udaas mausam ke dharkanain barf ho gayi hain

Jab un ki yakh bastagi par khanna tamazatein bhi shumaar karna

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

میری بستی غریب ہے مولا

اس کو اپنی امان میں رکھنا

Meri bastii ghareeb hai maula

Is ko apni Amaan mein rakhna

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

کچھ نہیں چاہیے تجھ سے اے مری عمر رواں

میرا بچپن میرے جگنو، میری گڑیا لادے

Kuch nahi chahiye tujh se ae meri Umar rawan

Mera bachpan mere jugno, meri guria lade

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

میرا تجھ پر یقیں کم ہو گیا ہے

محبت میں کہیں کم ہو گیا ہے

Mera tujh par yaqeen kam ho gaya hai

Mohabbat mein kahin kam ho gaya hai

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

محبتیں جب شمار کرنا

تو سازشیں بھی شمار کرنا

Muhabbaten jab shumaar karna

To sazishain bhi shumaar karna

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

خرج اتنا بھی نہ کر مجھ کو زمانے کے لئے

کچھ تو رہ جاؤں میں کام اپنے بھی آنے کے لئے

Kharch itna bhi nah kar mujh ko zamane ke liye

Kuch to reh jaon mein kaam apne bhi anay ke liye

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

میں بد دعا تو نہیں دے رہی ہوں اُس کو مگر

دعا یہی ہے اُسے مجھے سااب کوئی نہ ملے

Mein bad dua to nahi day rahi hon uss ko magar

Dua yahi hai ussay mujhe sa ab koi nah miley

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

دور ہے وقتِ مسیحائی تو

کیا ابھی زخم ہرے رہنے دوں ؟

Dur hai waqt e masehaie to

Kya abhi zakham harey rehne dun ?

Click to Share 

 

نوشی گیلانی : ایک مختصر جائزہ

اردو شاعری کی دنیا کا معروف نام نوشی گیلانی نے اپنے سحر انگیز کلام سے قارئین اور شائقین کے دل موہ لیے ہیں۔ اس کی گہری شاعری زندگی، محبت اور انسانی جذبات کے جوہر سے گونجتی ہے۔ اس مضمون میں، ہم نوشی گیلانی کی اردو میں شاعری کی دلفریب دنیا کا جائزہ لیتے ہیں اور ان کی مسلسل مقبولیت کے پیچھے اسباب تلاش کرتے ہیں۔

نوشی گیلانی، جن کا اصل نام خدیجہ اختر ہے، پاکستان کے شہر بہاولپور میں پیدا ہوئیں۔ اس نے چھوٹی عمر میں شاعری کی دنیا میں قدم رکھا، آیات تیار کرنے کے لیے ایک فطری ہنر کا مظاہرہ کیا جو انسانی روح کی گہرائیوں کو چھو سکتی ہے۔ برسوں کے دوران، اسے ایک ہم عصر اردو شاعرہ کے طور پر پہچان ملی جس کے کام نے ادبی منظر نامے پر انمٹ نقوش چھوڑے ہیں۔

نوشی گیلانی کی شاعری میں ایک ہمہ گیر کشش ہے جو ثقافتی اور لسانی حدود سے بالاتر ہے۔ اس کے کام کا مختلف زبانوں میں ترجمہ کیا گیا ہے، جس سے عالمی سامعین اس کی آیات کی خوبصورتی کو سراہ سکتے ہیں۔ پاکستان میں اور دنیا بھر میں اردو بولنے والی کمیونٹیز میں، وہ ایک ایسی شاعرہ کے طور پر منائی جاتی ہیں جنہوں نے اردو شاعری کی کلاسیکی روایت میں ایک جدید موڑ ڈالا ہے۔
نوشی گیلانی کو اردو ادب میں ان کی خدمات کے لیے متعدد ایوارڈز اور تعریفیں مل چکی ہیں۔ ان کی کتابیں، بشمول “اے میرِ لیب،” “شہر میں اُترتا ہوں،” اور “محبت ایک سب باری ہوگی” نے بڑے پیمانے پر پذیرائی حاصل کی ہے اور شاعری کے شائقین کی طرف سے ان کی قدر کی جاتی ہے۔

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

تم نے تو صرف خواب دیکھتے ہیں

ہم نے ان کے عذاب دیکھے ہیں

Tum ne to sirf khawab dekhte hain

Hum ne un ke azaab dekhe hain

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

ایسا دریا جو کسی اور سمندر میں گرے

اس سے بہتر ہے کہ مجھکو میراصحرالادبے

Aisa darya jo kisi aur samandar mein giray

Is se behtar hai ke mujhkoo mera sehra la dey

Click to Share 

 

Noshi Gilani Poetry in Urdu

 

اِک عمر سے ہم اس کی تمنا میں ہیں بے خواب

وہ چاند جو آنگن میں اترتا بھی نہیں ہے

Ik umar se hum is ki tamanna mein hain be khawab

Woh chaand jo aangan mein utartaa bhi nahi hai

Click to Share 

 

Conclusion

Noshi Gilani poetry in Urdu is a testament to the enduring power of words to touch the human heart. Her verses, filled with depth and emotion, have made her a beloved figure in the world of Urdu literature. As her work continues to inspire and resonate with readers, Noshi Gilani remains a shining star in the constellation of Urdu poets. Explore her poetry and immerse yourself in the enchanting world she weaves with her words.

اردو میں نوشی گیلانی کی شاعری انسانی دل کو چھونے کے لیے الفاظ کی لازوال طاقت کا ثبوت ہے۔ گہرائی اور جذبات سے لبریز ان کی نظموں نے انہیں اردو ادب کی دنیا میں ایک محبوب شخصیت بنا دیا ہے۔ چونکہ ان کا کام قارئین کو متاثر کرتا اور گونجتا رہتا ہے، نوشی گیلانی اردو شاعروں کے حلقہ میں ایک چمکتا ہوا ستارہ بنی ہوئی ہیں۔ اس کی شاعری کو دریافت کریں اور اپنے آپ کو اس پرفتن دنیا میں غرق کریں جسے وہ اپنے الفاظ سے بناتی ہے۔

 

band hotī kitāboñ meñ uḌtī huī titliyāñ Daal diiñ

kis kī rasmoñ kī jaltī huī aag meñ laḌkiyāñ Daal diiñ

ḳhauf kaisā hai ye naam is kā kahīñ zer-e-lab bhī nahīñ

jis ne hāthoñ meñ mere hare kāñch kī chūḌiyāñ Daal diiñ

hoñT pyāse rahe hausle thak ga.e umr sahrā huī

ham ne paanī ke dhoke meñ phir ret par kashtiyāñ Daal diiñ

mausam-e-hijr kī kaisī saa.at hai ye dil bhī hairān hai

mere kānoñ meñ kis ne tirī yaad kī bāliyāñ Daal diiñ

Click to Share 

kuchh bhī kar guzarne meñ der kitnī lagtī hai

barf ke pighalne meñ der kitnī lagtī hai

us ne hañs ke dekhā to muskurā diye ham bhī

zaat se nikalne meñ der kitnī lagtī hai

hijr kī tamāzat se vasl ke alaao tak

laḌkiyoñ ke jalne meñ der kitnī lagtī hai

baat jaisī be-ma.anī baat aur kyā hogī

baat ke mukarne meñ der kitnī lagtī hai

zo’m kitnā karte ho ik charāġh par apne

aur havā ke chalne meñ der kitnī lagtī hai

jab yaqīñ kī bāñhoñ par shak ke paañv paḌ jaa.eñ

chūḌiyāñ bikharne meñ der kitnī lagnī hai

Click to Share 

 

visāl-rut kī ye pahlī dastak hī sarzanish hai

ki hijr-mausam ne raste raste safar kā āġhāz kar diyā hai

tumhāre hāthoñ kā lams jab bhī mirī vafā kī hatheliyoñ par hinā banegā

to soch lūñgī

rafāqatoñ kā sunahrā sūraj ġhurūb ke imtihān meñ hai

hamāre bāġhoñ se gar kabhī titliyoñ kī ḳhushbū guzar na paa.e to ye na kahnā

ki titliyoñ ne gulāb-raste badal liye haiñ

agar koī shaam yuuñ bhī aa.e ki jis meñ ham tum lageñ parā.e

to jaan lenā

ki shaam be-bas thī shab kī tārīkiyoñ ke hāthoñ

tumhārī ḳhvāhish kī muTThiyāñ be-dhiyaniyoñ meñ kabhī khuleñ to yaqīn karnā

ki merī chāhat ke jugnuoñ ne

tumhāre hāthoñ ke lams-e-tāza kī ḳhvāhishoñ meñ

baḌe ghanere añdhere kaaTe

magar ye ḳhadshe, ye vasvase to takallufan haiñ

jo be-irāda safar pe nikleñ

to ye to hotā hai ye to hogā

ham apne jazboñ ko munjamid rā.egāñiyoñ ke supurd kar ke

ye soch leñge

ki hijr-emausam to vasl kī pahlī shaam se hī

safar kā āġhāz kar chukā thā

Click to Share 

 

Bundle of thanks to read all Noshi Gilani poetry in urdu, you can also visit Jaon Elia Best Poetry

اگر آپ کو ہماری پوسٹ پسند آئی ہے تو براہ کرم اسے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔ شکریہ

Spread the love

3 thoughts on “Top 26 Noshi Gilani Poetry in Urdu – 2 Line Urdu Poetry Copy Paste”

Leave a Comment